Results 1 to 1 of 1
  1. #1

    Thumbs up مرے ہم سفر ! تری نذر ہیں مری عمر بھر کی یہ دول&#

    Follow us on Social Media









    مرے ہم سفر ! تری نذر ہیں مری عمر بھر کی یہ دولتیں





    مرے شعر ، میری صداقتیں ، مری دھڑکنیں ، مری چاہتیں



    تجھے جذب کرلوں لہو میں میں کہ فراق کا نہ رہے خطر



    تری دھڑکنوں میں اتار دوں میں یہ خواب خواب رفاقتیں



    یہ ردائے جاں تجھے سونپ دوں کہ نہ دھوپ تجھ کو کڑی لگے



    تجھے دکھ نہ دیں مرے جیتے جی سرِ دشت غم کی تمازتیں



    مری صبح تیری صدا سے ہو ، مری شام تیری ضیا سے ہو



    یہی طرز پرسشِ دل رکھیں تری خوشبوں کی سفارتیں



    کوئی ایسی بزم بہار ہو میں جہاں یقین دلا سکوں



    کہ ترا ہی نام ہے فصلِ گل ، کہ تجھی سے ہیں یہ کرامتیں



    ترا قرض ہیں مرے روز و شب ، مرے پاس اپنا تو کچھ نہیں



    مری روح ، میری متاعِ فن ، مرے سانس تیری امانتیں





 

 

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •