Results 1 to 2 of 2
  1. #1
    Senior Member www.desirulez.net
    Join Date
    Nov 2011
    Posts
    145

    T

    Default Musalmano Ke 2 Azeem KHulfa

    Follow us on Social Media







    حضرت عمر رضی اللہُ تعالیٰ کا دورخلافت تھاایک دفعہ مدینے میں قحط پڑ گیا کے کئی دنوں تک لوگوں کوغلہ نصیب نہ ہواآخر ایک دن ملک شام سے ایک بہت بڑا اونٹوں کا قافلہ غلہ لے کر مدینے آیا جو کے حضرت عثمان رضی اللہُ تعالیٰ کا تھا۔پتہ چلتے ہی حضرت عمر رضی اللہُ تعالیٰ نے حضرت عثمان رضی اللہُ تعالیٰ سے کہا کہ آپ یہ غلہ ہمیں دے دیں ہم آپ کہ دو گُنا زیادہ منافع دیں گے حضرت عثمان نے انکار کر دیا تو حضرت عمر نے کہا کے چار گُنا زیادہ منافع لے لیں اور یہ غلہ ہمیں دے دیں حضرت عثمان نے پھر انکار کر دیاتو حضرت عمر جلال میں آگئے اور فرمایا کے ادھر ُامت محمد صلی اللہ علیہ وسلم بھوک سے مر رہی ہے اور آپ کو زیادہ منافع کی پڑی ہوئی ہے یہ کہہ کر وآپس آ گئے۔ کچھ دیر بعد مدینے کی گلیوں میں اعلان کروا دیا گیا کے جس کو جتنا بھی غلہ چاہیے وہ عثمان کے قافلے کے پاس آجائیںعثمان رضی اللہُ تعالیٰ کے قافلے کا منہ ہر کسی کے لئیے کھُلا ہے
    یہ سنتے ہی حضرت عمر زار و قطار رونے لگے۔
    صُبح فجر کی نماز کے لئیے مسجد نبوی میں تشریف لائے تو حضرت عثمان رضی اللہُ تعالیٰ کو دیکھ کر اونچی آواز میں کہنے لگے۔ عمر آج تو نے دنیا کے منافع کی بات کی مگر آج تو ایک شخص نے ایسا منافع کمایا کے اگر وہ اعمال نہ بھی کرے تو بھی جنت اس پر فرض کر دی گئی
    ٓاللہُ اکبر
    کیا آج بھی ہمیں ان جیسے لوگوں کی ضرورت نہیں دعا ہے اللہ ہمیں عمر و عثمان رضی اللہُ تعالیٰ جیسے خلیفہ اور حکمران عطا فرمائے
    ٓآمین

  2. #2
    Retired Staff www.desirulez.net
    Join Date
    Oct 2009
    Posts
    1,385

    T

    Default

    gud one

 

 

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •